Advice to those who are tried of watching pornography – Shaykh Abdur Razzaq Al-Badr

فحش ویب سائٹس کے عادی افراد کو نصیحت

فضیلۃ الشیخ عبدالرزاق بن عبدالمحسن العباد البدر حفظہ اللہ

(رکن تعلیمی کمیٹی، جامعہ اسلامیہ، مدینہ نبویہ)

ترجمہ: طارق علی بروہی

مصدر: مسجد دار السنۃ ریکارڈنگز۔

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

سائل کہتا ہے کہ: میں اللہ تعالی کے واسطے آپ سے مطالبہ کرتا ہوں کہ میرا یہ سوال شیخ سے ضرور پوچھیں گا۔ وہ اپنے سوال میں کہتا ہے کہ : مجھے اللہ کے لیے نصیحت کیجئے کیونکہ میں جہنم کے کنارے تک پہنچ چکا ہوں۔ یا شیخ،  مجھے پچھلے سال سے فحش ویب سائٹس(پورنوگرافک ویب سائٹس) کی لت لگ گئی ہے۔ اور جب کبھی بھی میں توبہ کرتا ہوں پھر واپس سے اس میں مبتلا ہوجاتا ہوں۔ واللہ! مجھے ان ویب سائٹس سے شدید ترین نفرت ہے لیکن اس کے باوجود ہر بار یہ مجھ پر غالب آجاتی ہیں اور یہی میری ناکامی کا سبب بن گئی ہيں۔ میں اپنے کام اور پڑھائی میں بہت ہونہار وکامیاب ہوا کرتا تھا لیکن اب میری حالت ایک ناکام شخص کی سی ہے؟

جواب: میں سب سے پہلے کہوں گا جیسا کہ سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے فرمایا:

’’ادْعُوا اللَّهَ لِأَخِيكُمْ أَنْ يُقْبِلَ بِقَلْبِهِ،وَأَنْ (يَهْدِيَهُ وَ) يَتُوبَ اللَّهُ عَلَيْهِ‘‘([1])

(اللہ تعالی سے اپنے بھائی کے لیے دعاء کرو کہ وہ اپنے دل سے اس کی طرف رجوع لائے(اور وہ اسے ہدایت دے) اور اللہ تعالی اس کی جانب توجہ فرماکر توبہ کی توفیق عنایت فرمائے)۔

پس ہم اللہ کریم رب عر ش عظیم سے دعاء کرتے ہیں کہ وہ اسے ہدایت دے اور اسے توبہ کی توفیق دے۔اور ہمیں اور اسے قول ثابت پر ثابت قدم رکھے ، اور ہمیں اور اسے اپنے نفس کی شرارتوں اور شامت اعمال سے بچائے۔

 پیارے بھائی میں آپ کو ایک ہی نصیحت کروں گا جسے ہمیشہ یاد رکھنا کیونکہ اسی میں آپ کی نجات ہے۔اور یہی سب سے بڑا واعظ ہے۔ ہمیشہ یہ یاد رکھیں کہ رب العالمین آپ کو دیکھ رہا ہے۔ اور وہ سبحانہ وتعالی آپ پر ہر حال میں مطلع ہے۔ اگر آپ کبھی خلوت میں ہوں تو یہ نہ کہیں کہ میں اکیلا ہوں بلکہ مجھ پر ایک نگران ہے۔اور اگر آپ تنہائی میں انٹرنیٹ کی اسکرین کےسامنے بیٹھے ہیں اور ان ویب سائٹس میں جانا چاہیں، اور یہ گمان کریں کہ لوگوں میں سے کسی کو اس کی اطلاع نہیں ہوگی تو یہ جان لیں کہ رب العالمین آپ  پر ضرور مطلع ہے۔

﴿اَلَمْ يَعْلَمْ بِاَنَّ اللّٰهَ يَرٰى﴾ (العلق: 14)

(کیا اسے علم نہیں کہ اللہ  تعالیٰ اسے خوب دیکھ رہا ہے)

یہ آیت آپ کے لیے ڈراوا  و تنبیہ ہے۔ اس آیت کے ذریعے اپنے آپ کو خبردار کریں۔ قرآن کریم کے ذریعے اپنے آپ کو وعظ کریں۔ کوئی مانع نہیں کہ اس آیت کو اپنے کمرے میں اپنے سامنے رکھ لیں تاکہ آپ ڈریں اور اس حرکت سے رک جائیں۔ جس میں آپ کو کوئی فائدہ نظر نہیں آتا، بلکہ یہ آپ کی پڑھائی، آپ کے اخلاق، آپ کی عبادت اور آپ کے سلوک پر اثر انداز ہوتی ہے، حالانکہ اس میں کوئی ایسا ثمرہ نہيں جو آپ کےلیے مفید ہو۔

اور یہی دشمنان اسلام کی چاہت ہوتی ہے کہ جب وہ یہ عریاں، فحش اور نقصان دہ فلمیں نشر کرتے ہيں تاکہ مسلمانوں کی اولادیں ضائع ہوجائیں، اور شہوات، خواہشات اور گمراہیوں کی پیروی میں مسلمانوں کی اولاد چوپایوں کی طرح بن کر رہ جائے بلکہ ان سے بھی گئے گزرے۔

اس لیے ضرورت ہے کہ آپ اللہ تعالی کا تقویٰ اختیار کریں اس سے ڈریں، اور ہمیشہ اللہ تعالی کی جانب رجوع لانے والے اور سچی توبہ کرنے والے بنیں۔

اور خصوصا ًآپ کے لیے میں یہ کہوں گا کہ جو آپ کا حال ہے اس کے پیش نظر آپ انٹرنیٹ پر جائز کام بھی نہ کریں بلکہ اسے اپنے گھر سے ہی نکال دیں۔مکمل طور پر اپنے گھر سے نکال دیں۔ ایک سیکنڈ بھی یہ آپ کے گھر میں نہيں رہنا چاہیے۔ آج رات یہ آپ کے گھر میں نہیں ہونا چاہیے کیونکہ اس کی موجودگی کا فساد آپ کےاوپر بالکل ظاہر ہے۔

لہذا یہ آپ کےپاس نہیں رہنا چاہیے اس امید پر بھی نہيں کہ آپ اس پر کچھ دوسرے مفید کام کرسکتے ہیں۔ نہیں، بلکہ اسے مکمل طور پر اپنے گھر سے نکال دیں اور شیطان وشر کا یہ راستہ ہی بند کردیں اور اللہ تبارک وتعالی کی جانب رجوع لائیں۔

ہم اللہ تعالی سے دعاء بھی کرتے ہیں کہ وہ  آپ کےدل کو اپنی طرف پھیر دےاور وہ آپ کی جانب توجہ فرماکر توبہ کی توفیق عنایت فرمائے۔ اور ہم سب کو معاف فرمائے، اور سیدھی راہ کی جانب ہدایت دے، اور ہمارے تمام امور کی اصلاح فرمادے، بے شک وہ سمیع، مجیب وقریب ہے۔

 


[1] تفسیر ابن ابی حاتم 18416، تفسیر ابن کثیر تفسیر سورۃ غافر۔