Tafseer of Surat-ul-Fatihah – Shaykh Muhammad bin Saaleh Al-Uthaimeen and Shaykh Saaleh bin Fawzaan Al-Fawzaan

شیخ محمد بن صالح العثیمین  رحمہ اللہ فرماتے ہیں:

 سورۂ فاتحہ کو ’’الفاتحہ‘‘ اس لیے کہا جاتا ہے کیونکہ اسے کے ساتھ قرآن کا آغاز ہوتا ہے اور یہ بھی کہا گیا کہ یہ سب سے پہلے نازل ہونے والی کامل سورۃ  ہے۔۔۔

اس سورۃ  کے بارے میں علماء کرام فرماتےہیں: یہ مکمل قرآن کریم کے مجمل معانی کو شامل ہے جن میں توحید، احکام، جزاء اور بنی آدم کے اختیار کردہ راستوں وغیرہ کا ذکر ہے، اسی لیے اسے ’’ام القرآن‘‘بھی کہا جاتا ہے، اور کسی بھی چیز کا اصل مرجع اس کی ماں کہلاتا ہے۔۔۔

اس سورۃ  کے بہت سے امتیازات ہیں جن کی وجہ سے یہ دوسری سورتوں سے ممتاز ہے۔

شیخ صالح بن فوزان الفوزان حفظہ اللہ فرماتے ہیں:

اس سورۃ کا قرآن کریم میں عظیم مقام ہے۔ کیونکہ یہ اس میں عظیم ترین سورۃ ہے۔ جیسا کہ عظیم ترین آیت قرآن کریم میں آیۃ الکرسی ہے۔ اور اپنی اہمیت کے پیش نظر  یہ مصحف میں سب سے پہلے لکھی ہوتی ہے اسی لیے اس کو فاتحۃ الکتاب بھی کہا جاتا ہے۔ پس یہ باتیں اس کی اہمیت ومنزلت پر دلالت کرتی ہیں کیونکہ اسے سب پر مقدم رکھ کر سب سے پہلی سورۃ بنانا اس کی اہمیت کے سبب سے ہی ہے۔