O Allaah! Let the Qur’an be cure for my sadness

اے اللہ! قرآن مجید کو میرے غموں کا علاج بنادے

ترجمہ: طارق بن علی بروہی

مصدر: حدیث مبارک۔

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:

کسی بھی شخص کو کوئی بھی پریشانی اور غم لاحق ہو اور وہ یہ دعاء پڑھے تو اللہ تعالی اس کی پریشانی اور غم دور فرماکر اس کی جگہ راحت عطاء فرماتا ہے:

”اللَّهُمَّ إِنِّي عَبْدُكَ، وَابْنُ عَبْدِكَ، وَابْنُ أَمَتِكَ، نَاصِيَتِي بِيَدِكَ، مَاضٍ فِيَّ حُكْمُكَ، عَدْلٌ فِيَّ قَضَاؤُكَ، أَسْأَلُكَ بِكُلِّ اسْمٍ هُوَ لَكَ سَمَّيْتَ بِهِ نَفْسَكَ، أَوْ عَلَّمْتَهُ أَحَدًا مِنْ خَلْقِكَ، أَوْ أَنْزَلْتَهُ فِي كِتَابِكَ، أَوْ اسْتَأْثَرْتَ بِهِ فِي عِلْمِ الْغَيْبِ عِنْدَكَ، أَنْ تَجْعَلَ الْقُرْآنَ رَبِيعَ قَلْبِي، وَنُورَ صَدْرِي، وَجِلَاءَ حُزْنِي، وَذَهَابَ هَمِّي “

 (اے اللہ!یقیناً میں تیرا بندہ ہوں اور تیرے بندے کا بیٹا اور تیری باندی کا بیٹا ہوں، میری پیشانی تیرے ہاتھ میں ہے، مجھ میں تیرا ہی حکم جاری وساری ہے، میرے بارے میں تیرا فیصلہ عدل و انصاف پر مبنی ہے، میں تیرے ہراس نام کے واسطے تجھ سے التجاء کرتا ہوں جو تو نے خود اپنا نام رکھا ہے، یا اپنی مخلوق میں سے کسی کو سکھایا ہے، یا اسے اپنی کتاب میں نازل فرمایا ہے، یا تو نے اسے علمِ غیب میں اپنے پاس محفوظ رکھا ہے، کہ تو قرآن مجید کو میرے دل کی بہار، اور میرے سینے کا نور، اور میرے غموں کاعلاج اور میری پریشانیوں کو دور کرنے والا بنادے)۔

راوی کہتے ہیں کہا گیا: یا رسول اللہ! کیا ہم اس کو سیکھ نہ لیں، آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  نے فرمایا: کیوں نہيں، یہ کلمات اسی لائق ہیں جو بھی انہیں سنے وہ اسے سیکھ لے([1])۔


[1] اسے امام احمد نے اپنی مسند 3704 میں روایت کیا ہے، اور شیخ البانی نے اسے السلسلۃ الصحیحۃ 199 میں صحیح قرار دیا ہے۔

quran_ghamo_ka_elaj_dua