Ruling regarding participating in a Persian, Iranian and Zoroastrian festival called “Nowruz” – Imaam Ibn-ul-Qayyam Al-Jawziyyah

فارسی مجوسی و ایرانی تہوار نوروز میں شرکت کا حکم

شمس الدین ابو عبداللہ محمد بن ابی بکر ابن القیم الجوزیہ  رحمہ اللہ المتوفی سن 751ھ

ترجمہ: طارق بن علی بروہی

مصدر: أحكام أهل الذمة 1/723-724۔

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

امام ابن القیم  رحمہ اللہ  اپنی کتاب  ’’أحكام أهل الذمة‘‘   میں فرماتے ہیں:

کافروں کے مخصوص شعائر وتہواروں میں انہیں مبارکباد دینا حرام ہے جیسے ان کی عید یاان کے روزوں کے موقع پر کہنا کہ  آپ کو عید مبارک ہو وغیرہ ۔ ایسا کام کرنے والے پر اگرچہ کفر کا فتوی نہ بھی لگے لیکن پھر بھی بہرحال یہ محرمات میں سے تو ہے۔ یہ تو ایسا ہے کہ جیسے کسی کو صلیب کو سجدہ کرنے پر مبارکباد دی جائے اور ایسی مبارکباد تو کسی کو شراب نوشی، ناحق قتل کرنے اور زنا کرنے پر مبارکباد دینے سے بھی بدتر فعل ہے۔ لیکن بہت سے ایسے لوگ جودین کو کوئی وقعت نہیں دیتے اس قسم کے امور میں واقع ہوتے ہیں، اور اپنے اس فعل کی قباحت تک سے ناآشنا ہوتے ہیں۔ چناچہ جس شخص نے بھی کسی بندے کو گناہ، بدعت یا کفر پر مبارکباد دی تو گویا اس نے اللہ کے غیض وغضب کا اپنے آپ کو حقدار ٹھہرا لیا۔

مزید فرماتے ہیں:

اہل علم كا اتفاق ہے كہ مسلمانوں كےليے مشركوں كی عيدوں ميں شركت كرنا جائزنہيں ہے، اور مذاہب اربعہ كےفقہاء نےبھی اپنی كتب ميں اس كی صراحت كی ہے…. اور امام بيہقی  رحمہ اللہ  نےصحيح سند كےساتھ   عمر بن خطاب  رضی اللہ عنہ  سے روايت كيا ہے كہ  عمر رضی اللہ عنہ  نےكہا:

’’وَلا تَدْخُلُوا عَلَى الْمُشْرِكِينَ فِي كَنَائِسِهِمْ يَوْمَ عِيدِهِمْ، فَإِنَّ السَّخْطَةَ تَنْزِلُ عَلَيْهِمْ‘‘([1])

(مشركوں كی عيد كےدن ان كےگرجا گھروں(چرچ)  ميں مشركوں كےپاس نہ جاؤ كيونكہ ان پر(اللہ کی)  ناراضگی اور غصہ نازل ہوتا ہے)۔

اور  عمر  رضی اللہ عنہ  كا يہ بھی قول ہےكہ:

’’اجْتَنِبُوا أَعْدَاءَ اللَّهِ فِي عِيدِهِمْ‘‘([2])

(اللہ كےدشمنوں سےان كی عيدوں ميں اجتناب كيا كرو)۔

اور امام بيہقی  رحمہ اللہ نے  عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما سے جيد سند كےساتھ روايت كيا ہے كہ انہوں نےفرمایا:

’’من مَرَّ ببلاد الأعاجم فصنع نيروزهم ومهرجانهم وتشبه بهم حتى يموت وهو كذلك حشر معهم يوم القيامة‘‘([3])

(جو كوئی بھی عجميوں كےملك سےگزرا اور اس نےان كے نيروز(نوروز) اور مہرجان([4]) كےجشن منائے اورموت تك ان سےمشابہت اختيار كئے رکھی تو وہ روز قيامت بھی ان كےساتھ اٹھايا جائےگا )۔


[1] السنن الکبریٰ للبیہقی 9/234۔

[2] السنن الکبریٰ للبیہقی 9/234۔

[3] السنن الکبریٰ للبیہقی 9/234 میں یہ الفاظ ہیں: ’’مَنْ بَنَى بِبِلادِ الأَعَاجِمِ وَصَنَعَ نَيْرُوزَهُمْ وَمِهْرَجَانَهُمْ وَتَشَبَّهَ بِهِمْ، حَتَّى يَمُوتَ، وَهُوَ كَذَلِكَ حُشِرَ مَعَهُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ‘‘۔

[4] جسے فارسی مجوس اور ایرانی ہر سال فارسی سال کے آغاز فروردین  مہینے میں 21 مارچ یا اس سے اگلے پچھلے دن مناتے ہیں۔

irani_farsi_majosi_nowruz_shirkat_hukm