The religious political parties and their neglecting the danger of Shirk and degrading Tawheed and its ‘Ulamaa – Shaykh Rabee bin Hadee Al-Madkhalee

دینی سیاسی جماعتوں کی شرک سے عدم توجہی اور توحید وعلماء توحید کی توہین کرنا

فضیلۃ الشیخ ربیع بن ہادی المدخلی حفظہ اللہ

(سابق صدر شعبۂ سنت، مدینہ یونیورسٹی)

ترجمہ: طارق بن علی بروہی

مصدر: التوحید اولا ًسے ماخوذ۔

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

دینی سیاسی جماعتوں کی شرک کے سدباب سے عدم توجہی

اے فرزندان توحید! تمہارا کبھی بھی یہ قبرپرست اور بدعات وخرافات میں ملوث لوگ مذاق نہ اڑاتے، اگر یہ اللہ تعالی کی توحید اور دعوت انبیاء کرام (علیہم الصلاۃ والسلام) پر ایمان لاتے اور کماحقہ اس کی معرفت حاصل کرتے،  کیونکہ یہ علم حاصل کرنے کے بعد وہ جان جاتے اور پھر اپنے معاشروں کی اصلاح کا آغاز اسی دعوت سے کرتے ۔ ان کے معاشروں کی ایک بہت بڑی اکثریت شرک وبدعات میں ڈوبی ہوئی ہےاوریہ خود ان کے ساتھ مشارکت کرتے اور ان خرافات کو مزید راسخ کرتے ہیں۔

آپ مصر چلے جائیں خصوصاً سید بدوی کی عید میلاد کے موقع پر،  وہی مصر جہاں سے دعوت  اخوان المسلمین کی ابتداء ہوئی، تو آپ اخوان المسلمین کی بڑی بڑی شخصیتوں کو ان عیدوں میں جن سے یہود تک شرمائیں شرکت کرتا ہوا پائیں گے، یا پاکستان چلےجائیں جہاں مودودی کی دعوت ہے، وہاں بھی آپ مزار پرستوں، قبرپرستوں، بدعتیوں وغیرہ کو ہر قسم کےشرک میں ملوث پائیں گے،  جبکہ آپ نہیں پائیں گے کہ مودودی کی دعوت نے کسی شخص کو ان باتوں کی طرف توجہ دلائی ہو اوران میں اس کے سدباب کے لئے کوئی تحریک پیدا کی ہو، بلکہ ان کاکام تو بس سیاست میں لوگوں کو مشغول رکھنا ہے بس۔

سیاست کی خاطر عقیدۂ توحید کی توہین کرنا

پھر اس سیاست نے ان کا یہ حال کیا کہ وہ سیکولر لوگوں سے دوستانہ روابط رکھتے ہیں،  اسی طرح روافض اور مختلف اقسام کے مشرکوں سے بھائی چارہ قائم کرتے ہیں فقط اپنے سیاسی اہداف کے حصول کی خاطر، لیکن لگتا ہے ہم کبھی باز نہیں آئیں گے، ہم پر سمجھانے والے چیخ چیخ کر تھک گئے، دعوت حق اور تنبیہات ہمارے سروں سے گزرتی گئی، محض ان باطل پرستوں اورگمراہوں کی پاس جو کچھ ہے اس سے مخبوط الحواس ہوکر ہم میں سے اکثر کے یہاں دعوت حق کی قبولیت کے بجائے تکبر اور نفرت میں اضافہ ہی ہوا۔

ان کی تفسیریں پڑھ لو جو انہوں نے کلمۂ طیبہ ’’لا الہ الا اللہ‘‘ (اللہ تعالی کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں) کی کی ہیں، ’’لا خالق ، لا رازق،  لا موجود ، لا مهيمن، لا مسيطر‘‘ (کوئی خالق، کوئی رازق، کوئی موجود، کوئی نگہبان، کوئی قابض نہیں اللہ تعالی کے سوا) اس پر ایک مزید نیا اضافہ بھی شامل کرلیجئے ’’لا حاكم إلا الله‘‘ (اللہ تعالی کے سوا کوئی حاکمِ اعلیٰ نہیں)۔ پس ایسی تفسیرات سے انہوں نے لوگوں کو توحید الہی اور دعوت انبیاء سے اور بھی دور کردیا، اسی لئے یہ لوگ توحید کی قدر گھٹانے کی کوشش کرتے ہیں، ان کے نزدیک توحید پر بات کرنے کے لئے آدھا گھنٹہ یا دس منٹ ہی کافی ہیں۔  یہ سب حرکتیں توحید سے لوگوں کو نہ صرف پھیرنے کے لئے ہیں اور اس کی شان گھٹانے کے لئے ہیں بلکہ اس کی توہین کرنے کے لئے ہیں، یہ کیا کھیل کھیلا جارہا ہے؟ جو ان گمراہیوں اور دعوت انبیاء کی سیاسی تحریف کی جانب دعوت دینے والے سب سے بڑے داعیان ہیں وہ اللہ کی قسم! ان لوگوں کے نزدیک مقدس ہستیاں ہیں اور جو داعیان توحید ہیں وہ ان کے نزدیک ایجنٹ اور جاسوس ہیں، سبحان اللہ!، کیا توحیدکی جانب دعوت دینے والےایجنٹ اور جاسوس ہوتے ہیں؟!

علماء توحید کی توہین کرنا

وہ سیکولر اور ملحدتہمتیں جو فرنگی استعمار کے زمانے میں دوسرے ممالک میں پائیں جاتی تھیں اسے سرزمین توحیدمیں منتقل کردیا ہے، اور اسے علماء توحید پر فٹ کردیا ہے، چناچہ علماء توحید جاسوس اور ایجنٹ ہیں اوران کے نزدیک یہ مملکت دار الکفر ہے ، یعنی مملکت مسلمہ جو کتاب اللہ اور سنت نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تنفیذ کرتی ہے اسے کافر ریاست قرار دے دیا، اور اس پر چاروں جانب سے جنگ مسلط کردی گئی، چاہے صدام آئے یا خمینی یا پھر کوئی بھی اس مملکت کا دشمن آئے یہ اس کی ساتھ کھڑے ہوتے ہیں، اس کی حمایت کرتے ہیں، کیوں؟ کیونکہ یہ بیچارے لوگ توحید سے بالکل جاہل ہیں، میرے بھائی یہ لوگ توحید کی قدروقیمت سے واقف ہی نہیں۔ وہ توحید جو آپ کے پرائمری، مڈل، سیکنڈری، یونیورسٹی یا ہائیر اسٹیذیزمیں پڑھائی جاتی ہے میرے بھائی ایک بہت بڑی نعمت ہے۔ایسا تعلیمی سسٹم پوری دنیا میں آج کہیں موجود نہیں، پس علماء توحید کی تکریم واحترام کرو، میرے بھائی تم چاہتے کیا ہو؟ بھائی ہمارے یہاں بھی غلطیاں موجود ہیں اللہ کی قسم! مگر اسے نرمی وشفقت سے صحیح کرو۔ یہ کیا کہ انہیں کافر قرار دو اور جنگ شروع کردو۔ جو انہیں (حکومت کو) نصیحت کرتے ہیں اور ان سے رابطہ رکھتے ہیں تم انہیں ایجنٹ اور جاسوس قرار دیتے ہو، یا اللہ! آسمان کے رب کی قسم! یہ تو تباہی وبربادی کے سوا کچھ بھی نہیں، اللہ کی قسم ! یہ دشمنوں کی چالیں ہیں۔ کمسن بچوں کو ان کی ماؤں کی گود سے اٹھاکر ان کے ایسے مجرمانہ اور پلید افکارسے برین واش کرتے ہیں جو ان کے ذہنوں میں توحید اور اہل توحید کے کردار کو مسخ کرتے ہيں۔اللہ کی قسم! ہم جانتے ہیں کہ پہلی بار یہ فکری جنگ برپا کرنے والے بیچارے روس سےیہاں آئے تھے، جتنا ہمیں علم ہے اس کے مطابق انہی کی طرف سے سب سے پہلے اس ملک کے علماء پر طعن اور حکام کی تکفیر کی گئی تھی۔ وہ یہاں آئے اس حال میں کہ نہ توحید جانتے تھے اور نہ ہی اسلام کے اصول وفروع سے واقف تھے، سب سے پہلی چیز جو انہوں نے لوگوں کے دلوں میں گاڑنا شروع کی وہ اس عقیدے اور اہل عقیدہ سے بغض تھا، دیکھئے کیسی سازشیں اور مکروفریب ہے یہ سب، لیکن آج کون ہماری اس بات کو سمجھے، جی ہاں! میرے بھائیوں ایسے بھی لوگ موجود ہیں یہاں جو ان باتوں کو سمجھتے ہی نہیں ہیں،  اسی لئے آپ کو چاہیے کہ پڑھو، غوروفکر کرو، انبیاء کرام (علیہم الصلاۃ والسلام) کی دعوت کے بارے میں پڑھو، قرآن مجید پڑھو۔

jamats_ka_tawheed_ulama_tawheen_karna