The Salafee Manhaj and Ummah’s need towards it – Shaykh Saaleh bin Fawzaan Al-Fawzaan

نام کتاب: منہج سلف صالحین اور امت کو اس کی حاجت

مصنف:  فضیلۃ الشیخ صالح بن فوزان الفوزان حفظہ اللہ

ترجمہ  :  طارق بن علی بروہی

مصدر:    منهج السلف الصالح وحاجة الأمة إليه۔


بسم اللہ الرحمن الرحیم

اللہ تعالی کا فرمان ہے:

(جن لوگوں نے سبقت کی(یعنی سب سے پہلے) ایمان لائے مہاجرین میں سے بھی اور انصار میں سے بھی ،اور جنہوں نے بطورِ احسن ان کی پیروی کی، اللہ ان سے راضی ہے اور وہ اللہ سے راضی ہیں، اور اس نے ان کے لئے باغات تیار کئے ہیں جن کے نیچے نہریں بہہ رہی ہیں، اوروہ  ہمیشہ ان میں رہیں گے ، یہی بڑی کامیابی ہے)       [التوبۃ : 100]

اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:(تم میں سے بہترین میرے زمانے کے (لوگ)  ہیں، پھر جو ان کے بعد آئیں، پھر جو ان کے بعد آئیں)۔ الحدیث

شیخ صالح الفوزان حفظہ اللہ فرماتے ہیں: پس یہ اس امت کے لیے اعلی نمونہ وقدوۃ ہیں۔ اور ان کا منہج وہ طریقہ ہے جس پر یہ اپنے عقیدے، معاملات، اخلاق اور تمام امور میں چلتے رہے ہیں۔  یہ منہج کتاب وسنت سے ماخوذ ہے کیونکہ انہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے قرب حاصل تھا، اور وحی کے نازل ہونے والے دور سے بھی قرب حاصل تھا، اور انہوں نے براہ راست رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے علم حاصل کیا۔ پس یہ خیرالقرون ہیں اور ان کا منہج خیر المناہج ہے۔ اسی لیے مسلمان ان کا منہج جاننے کے لیے حریص ہوتے ہیں تاکہ اس سے ماخوذ کریں ، کیونکہ ان کے منہج پر چلنا ممکن نہیں جب تک اس کی معرفت نہ ہو ، تعلم نہ ہو اور اس پر عمل نہ ہو۔