menu close menu

کیا توحید کی تقسیم محض اصطلاحی مسئلہ ہے؟ – شیخ صالح بن فوزان الفوزان

Is the categorization of Tawheed only a terminological matter? – Shaykh Saaleh bin Fawzaan Al-Fawzaan

کیا توحید کی تقسیم محض ایک اصطلاحی مسئلہ ہے

فضیلۃ الشیخ صالح بن فوزان الفوزان حفظہ اللہ

(سنیئر رکن کبار علماء کمیٹی، سعودی عرب)

ترجمہ: طارق علی بروہی

مصدر: فضیلۃ الشیخ کی آفیشل ویب سائٹ سے لیا گیا فتوی.

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

 

سوال: فضیلۃ الشیخ بعض ایسے لوگ ہیں جو توحید کی ایک چوتھی قسم بناتے ہیں اور اسے توحیدِحاکمیت کا نام دیتے ہیں؟

 

الشیخ: یہ بالکل غلط ہے اور گمراہی ہے ، اور اہل علم کے یہاں جو بات مقرر ہے کہ توحید کی  دو یا تین اقسام ہیں اس پرخوامخواہ کا ایک اضافہ ہے۔ چناچہ ان میں سےایک فریق کہتا ہے کہ توحید کی ایک ہی قسم ہے اور دوسرا کہتا ہے نہیں بلکہ توحید کی چار اقسام ہے، حالانکہ حقیقت میں یہ سب گمراہی ہے۔

 

سوال: شیخ وہ یہ حجت پیش کرتے ہیں کہ اس تقسیم کی جو اصل ہے …

 

الشیخ: وہ اسے توحید حاکمیت کے نام سے کیوں ایک مستقل قسم بناتے ہیں اور کیوں نہیں اسے توحید الوہیت میں داخل سمجھتے؟([1]) جبکہ بلاشبہ یہ توحید الوہیت ہی میں شامل ہے۔ کیونکہ یہ تو عبادات کی ہی ایک قسم ہے اورانہیں کی انواع میں سے ایک نوع ہے جن کے ذریعہ  اللہ تعالی کی عبادت کی جاتی ہے۔

 

سوال: شیخ وہ کہتے ہیں کہ توحید کی یہ تین اقسام ربوبیت، الوہیت اور اسماء وصفات علماء کے اجتہادات اور تتبع و استقراء(غوروفکر) کی نتیجہ میں وجود پذیر ہوئیں ہیں (لہذا اس میں کمی و زیادتی کرنے میں کوئی مضائقہ نہیں)؟

 

الشیخ: صحیح ہے، بس ہمیں ان کا اجتہاد ہی کافی ہے اور جس پر ان کا اجماع ہوگیا ہے تو ہمیں بھی اس پر اضافہ کرنے کی کوئی حاجت نہیں۔ (ایک طرف تو) ان کا اجماع ہوگیا ہے پھر اس بیسویں صدی میں کوئی جاہل آئے اور دعوی کرے کہ میں بھی مجتہد ہوں اور اس تقسیم میں اضافہ کرےجس پر علماء کرام کا اجماع ہوچکا ہے، یہ سب گمراہی کے سوا اور کچھ نہیں۔

 

سوال: اس بیان کردہ علت کے بارے میں کیا کہیں گے؟

 

الشیخ: مزید برآں یہ ایک وا‏ضح غلطی ہےکیونکہ حاکمیت جو ہے وہ توحید الوہیت میں داخل ہے، کس نے  اسے ایک مستقل قسم قرار دیا ہے؟ پھر اسے چاہیے کہ نماز کو بھی پانچویں یا چھٹی قسم بنالے اسی طرح جہاد کو ساتویں قسم بنادےاور ہر عبادت کو توحید کی اقسام بنانا شروع کردے، یہ سب کچھ غلط ہے۔

 

سوال: تو کیا ہم اس قول کو بدعت کہیں گے؟

 

الشیخ: بالکل یہ تو اجماع کے خلاف ہے، کسی بھی اہل علم نے ایسا نہیں کہا چناچہ یہ اجماع کے خلاف ہوا ۔

 


[1] مزید پڑھیں ہماری ویب سائٹ پر مضمون ’’توحید حاکمیت کو محض بطور ایک سیاسی ہتھکنڈے کے استعمال کرنا‘‘ از شیخ البانی رحمہ اللہ۔ (توحید خالص ڈاٹ کام)

August 4, 2012 | الشيخ صالح بن فوزان الفوزان, توحید, مقالات | 0
Tags: , ,

tawheedekhaalis is on Mixlr

Tawheedekhaalis.com

Tawheedekhaalis.com