It is You alone [O Allāh] that we worship and it is You alone that we ask for help – Shaykh Abdur Razzaq Al-Badr

اِيَّاكَ نَعْبُدُ وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ 

فضیلۃ الشیخ عبدالرزاق بن عبدالمحسن العباد البدر حفظہ اللہ

(رکن تعلیمی کمیٹی، جامعہ اسلامیہ، مدینہ نبویہ)

ترجمہ: طارق علی بروہی

مصدر: شرح الدروس المهمة لعامة الأمة۔

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

﴿اِيَّاكَ نَعْبُدُ وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ﴾ (الفاتحۃ: 5)

(ہم تیری ہی عبادت کرتے ہیں، اور تجھ ہی سے مدد چاہتے ہیں)

﴿اِيَّاكَ نَعْبُدُ وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ﴾  میں اللہ تعالی کے لیے عبادت اور استعانت (مدد طلبی) میں اخلاص ہے۔

﴿اِيَّاكَ نَعْبُدُ﴾ یعنی میں اپنی عبادت کو تیرے لیے خالص کرتا ہوں، تیرے سوا کسی کی عبادت نہیں کرتا۔

﴿وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ﴾ اپنی استعانت کو بھی تیرے لیے خالص کرتا ہوں، تیرے سوا کسی سے استعانت نہیں کرتا۔

اور ﴿اِيَّاكَ نَعْبُدُ﴾ میں شرک سے برأت ہے، جبکہ ﴿وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ﴾ میں اپنی توفیق و قوت سے برأت ہے۔

﴿اِيَّاكَ نَعْبُدُ﴾ میں ”لا الہ الا اللہ“ (اللہ تعالی کے سوا کوئی معبود برحق نہیں) کے حق کی ادائیگی ہے، اور ﴿وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ﴾ میں ”لاحول ولا قوۃ الا باللہ“  (نہیں ہے نیکی کرنے کی توفیق اور برائی سے بچنے کی طاقت مگر اللہ کی طرف سے) کے حق کی ادائیگی ہے۔

﴿اِيَّاكَ نَعْبُدُ﴾ میں شرک و ریاءکاری سے نجات ہے، اور ﴿وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ﴾ میں گھمنڈ اور تکبر سے نجات ہے۔

Read/ Download PDF