مختصر سیرت امیر المؤمنین سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ – توحید خالص ڈاٹ کام

مختصر سیرت امیر المؤمنین سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ – توحید خالص ڈاٹ کام

Brief Seerah of Ameer-ul-Mo'mineen 'Umar bin Khattab (RadiAllaho anhu) – tawheedekhaalis.com

مختصر سیرت امیر المؤمنین سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ

ترجمہ وترتیب: طارق علی بروہی

مصدر: مختلف مصادر

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ:

’’إِنَّ اللَّهَ جَعَلَ الْحَقَّ عَلَى لِسَانِ عُمَرَ وَقَلْبِهِ، وَقَالَ ابْنُ عُمَرَ: مَا نَزَلَ بِالنَّاسِ أَمْرٌ قَطُّ فَقَالُوا فِيهِ، وَقَالَ: فِيهِ عُمَرُ، أَوْ قَالَ: ابْنُ الْخَطَّابِ فِيهِ شَكَّ خَارِجَةُ إِلَّا نَزَلَ فِيهِ الْقُرْآنُ عَلَى نَحْوِ مَا قَالَ عُمَرُ ‘‘([1])

(بے شک اللہ تعالی نے عمررضی اللہ عنہ کی زبان اور دل میں حق کو رکھ دیا ہے۔  سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں: لوگوں کو کوئی معاملہ درپیش آتا اور وہ اس میں اپنی بات کرتے ساتھ میں سیدنا عمر رضی اللہ عنہ  بھی اپنی رائے دیتے  (یا فرمایا: ابن الخطاب (راوی) خارجہ کو شک ہوا) الا یہ کہ قرآن کریم سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کی رائے کے موافق نازل ہوتا)۔

 


[1] صحیح ترمذی 3682۔

 

2016-10-11T07:20:08+00:00

Articles

Scholars