menu close menu

کیا عقیدے ومنہج میں اختلاف کے باوجود اتحاد ہوسکتا ہے؟ – شیخ صالح بن فوزان الفوزان

Can we unite in spite of differences in Aqeedah and Manhaj? – Shaykh Saaleh bin Fawzaan Al-Fawzaan

کیا عقیدے ومنہج میں اختلاف کے باوجود اتحاد ہوسکتا ہے؟   

فضیلۃ الشیخ صالح بن فوزان الفوزان حفظہ اللہ

(سنیئر رکن کبار علماء کمیٹی، سعودی عرب)

ترجمہ: طارق علی بروہی

مصدر: الأجوبة المفيدة عن أسئلة المناهج الجديدة، س 93۔

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

سوال: کیا منہج اور عقیدے میں اختلاف کے باوجود اتحاد واجتماع ہوسکتا ہے؟

جواب: منہج اور عقیدے کے اختلاف کے ساتھ اتحاد واجتماع ممکن نہيں ہے۔ اس کی سب سے بہترین دلیل بعثت نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پہلے عرب کی حالت ہے، کہ وہ سب دست وگریباں اور متفرق تھے، لیکن وہ اسلام میں توحید کے جھنڈے تلے داخل ہوئے اور ان کا عقیدہ ایک ہوگیا اور منہج بھی ایک ہوگیا، اور ان کی حکومت وریاست قائم ہوگئی۔ اللہ تعالی نے انہیں اپنے اس فرمان میں یاد دہانی کروائی ہے کہ:

﴿وَاذْكُرُوْا نِعْمَتَ اللّٰهِ عَلَيْكُمْ اِذْ كُنْتُمْ اَعْدَاءً فَاَلَّفَ بَيْنَ قُلُوْبِكُمْ فَاَصْبَحْتُمْ بِنِعْمَتِھٖٓ اِخْوَانًا﴾ (آل عمران: 103)

(اور اپنے اوپر اللہ کی اس نعمت کو یاد کرو، جب تم دشمن تھے تو اس نے تمہارے دلوں کے درمیان الفت ڈال دی تو تم اس کی نعمت سے بھائی بھائی بن گئے)

اور اللہ تعالی نے اپنےنبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  سے فرمایا:

﴿لَوْ اَنْفَقْتَ مَا فِي الْاَرْضِ جَمِيْعًا مَّآ اَلَّفْتَ بَيْنَ قُلُوْبِهِمْ وَلٰكِنَّ اللّٰهَ اَلَّفَ بَيْنَهُمْ ۭاِنَّهٗ عَزِيْزٌ حَكِيْمٌ﴾ (الانفال: 63)

(اگر تم زمین میں جو کچھ ہے سب خرچ کر دیتے پھر بھی ان کے دلوں کے درمیان الفت نہ ڈال سکتے، اور لیکن اللہ نے ان کے درمیان الفت ڈال دی، بےشک وہ سب پر غالب، کمال حکمت والا ہے)

اللہ تعالی کافروں ، مرتدوں  اور گمراہ فرقوں کے مابین باہمی الفت نہیں ڈالتا([1])۔ بلکہ صرف اور صرف مومنین توحید پرستوں کے دلوں میں باہمی الفت ڈالتا ہے۔ اللہ تعالی کافروں  اور منافقوں کے متعلق فرماتا ہے کہ جو اسلام کے منہج اور عقیدے کے مخالفین ہیں:

﴿تَحْسَبُهُمْ جَمِيْعًا وَّقُلُوْبُهُمْ شَتّٰى ۭذٰلِكَ بِاَنَّهُمْ قَوْمٌ لَّا يَعْقِلُوْنَ﴾ (الحشر:  14)

(تم خیال کرو گے کہ وہ اکٹھے ہیں، حالانکہ ان کے دل الگ الگ ہیں، یہ اس لیے کہ بےشک وہ ایسے لوگ ہیں جو عقل نہیں رکھتے)

اور اللہ تعالی فرماتا ہے:

﴿وَلَا يَزَالُوْنَ مُخْتَلِفِيْنَ، اِلَّا مَنْ رَّحِمَ رَبُّكَ﴾  (ھود: 118-119)

(وہ تو برابر اختلاف کرتے رہیں گے، مگر جس پر تیرا رب رحم کرے)

تو یہ فرمانا کہ:  ﴿اِلَّا مَنْ رَّحِمَ رَبُّكَ﴾ یہ صحیح عقیدے والے لوگ ہیں اور صحیح منہج والے، یہ وہ لوگ ہيں جو اختلاف سے بچے رہتے ہیں۔

جو لوگ یہ کوشش کرتے ہیں کہ لوگوں کو عقیدے کے بگاڑ اور منہج کے اختلاف کے ساتھ جمع کردیں تو وہ ایک محال چیز کی کوشش کرتے ہیں، کیونکہ دو متضاد چیزوں  میں جمع کرنا محال ہے۔

دل جڑ نہيں سکتے، نہ کلمہ یکجا ہوسکتا ہے سوائے کلمۂ توحید کے([2])، جب اس کا معنی صحیح طور پر جانا جائے اور اس کے تقاضے پر ظاہراً وباطناً عمل کیا جائے، ناکہ محض زبان سے اسے ادا کیا جائے جبکہ جس بات پر یہ کلمہ دلالت کرتا ہے اس کی مخالفت کی جائے، اس صورت میں یہ کوئی فائدہ نہيں دے گا۔

 


[1] جیسا کہ ان موجودہ فرقوں اور احزاب کا حال ہے جو منظر عام پر موجود ہيں جیسا کہ کہا جاتا ہے کہ یہ سب سےبڑی دلیل اور شاہد ہے کہ وہ کتاب اللہ کے تعلق سے مختلف ہیں اور کتاب اللہ کی مخالفت کرتے ہیں۔ حالانکہ جب دل متفق ہوتے ہیں اور باہم مانوس ہوتے ہیں تو یقیناً جڑ جاتے ہیں جبکہ اس کے برعکس کا معاملہ برعکس ہوتا ہے۔ جیسا کہ یہ وصف ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زبانی ایک صحیح حدیث میں بیان ہوا کہ فرمایا:

"الْأَرْوَاحُ جُنُودٌ مُجَنَّدَةٌ فَمَا تَعَارَفَ مِنْهَا ائْتَلَفَ وَمَا تَنَاكَرَ مِنْهَا اخْتَلَفَ "  (البخاری : 3158)

(روحوں کے جھتے جھنڈ کے جھنڈ الگ الگ تھے۔ پھر وہاں جن روحوں میں آپس میں پہچان تھی ان میں یہاں بھی لگاؤ ہوتا ہے اور جو وہاں غیر تھیں یہاں بھی وہ خلاف رہتی ہیں ) (الحارثی)۔

[2] ہمارے اس دور میں جو لوگ عقیدے کے بگاڑ اور منہج کے اختلاف کے باوجو دلوگوں کو جمع کرنا چاہتے ہيں ان میں سے ایک کا بطور مثال ناکہ بطور حصر ذکر کرتے ہیں کہ وہ فرقہ اخوان المسلمین ہیں، کہ یہ لوگ اپنے صفوں میں ہر ایک کو ضم کرلیتے ہیں خواہ رافضی ہو یا جہمی، اشعری، خارجی، معتزلی بلکہ اسی طرح سے نصرانی کو بھی ، مت بھولیں گا۔ محترم قاری آپ پہلے بھی اس کتاب میں پڑھ چکے ہيں بعض اہل علم کے اقوال اس فرقے اخوان المسلمین کے تعلق سے کہ بلاشبہ یہ توحید کی جانب دعوت کا کوئی اہتمام نہيں کرتے، ناہی شرک سے ڈراتے وخبردار کرتے ہيں۔ اور یہی صفت وخصوصیت فرقہ تبلیغی جماعت میں بھی پائی جاتی ہے ، اور اخوانیت اور اخوانی قطبیت بھی اس سے کچھ بعید نہیں۔ (الحارثی)

September 13, 2017 | الشيخ صالح بن فوزان الفوزان, عقیدہ ومنہج, مقالات | 0

tawheedekhaalis is on Mixlr

www.tawheedekhaalis.com

www.tawheedekhaalis.com