menu close menu

طلبِ علم میں کثرتِ مشغولیت کے سبب بیوی کو نظر انداز کرنا – شیخ عبید بن عبداللہ الجابری

Being very busy with seeking knowledge while neglecting one's wife – Shaykh Ubaid bin Abdullaah Al-Jabiree

طلبِ علم میں کثرتِ مشغولیت کے سبب بیوی کو نظر انداز رکرنا   

فضیلۃ الشیخ عبید بن عبداللہ الجابری حفظہ اللہ

(سابق مدرس جامعہ اسلامیہ، مدینہ نبویہ)

ترجمہ: طارق علی بروہی

مصدر: ویب سائٹ میراث الانبیاء: نرجو توجيه نصيحة لطلبة العلم الذين يهملون زوجاتهم

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

 

سوال: احسن اللہ الیکم شیخنا، اللہ تعالی ہمیں اور آپ کو ثابت قدمی عطاء فرمائے یہاں تک کہ ہم اس سے ملاقات کریں، چھٹا سوال ہے، سائل کہتا ہے: فضیلۃ الشیخ ہم آپ سے امید رکھتے ہيں آپ رہنمائی پر مبنی کوئی کلام فرمائیں یا نصیحت  کیجئے ان شوہروں کو جو بہت محنت کے ساتھ طلب علم کرتے ہيں، ساتھ ہی اپنے دینی وخاندانی امور کا بھی شدید اہتمام کرتے ہيں، لیکن جو کچھ ان کی بیوی مطالبہ کرتی ہیں اس سے حد درجے لاپرواہی برتتے ہیں جیسے اسے دیکھے، اس کے لیے خاص اہتمام کرے، اور اسے اس کی منزلت واحترام کا شعور دلانے کی حرص کرے، اور وہ بیوی ہمیشہ بس صبر کو لازم پکڑے رہتی ہے لیکن آخرکار وہ بھی ایک عورت ہے اس کی اپنی ضروریات ومعاملات ہیں؟

 

جواب: اولاً: جس قدر مجھے علم ہے اس کے مطابق بلاشبہ یہ ایک شاذ ونادر سی صورت ہے، ایسا نہیں ہے جیسا بظاہر سائلہ کے سوال سے محسوس ہوتا ہے۔

 

ثانیاً: ان لوگوں پر یہ ضروری ہے جن سے یہ حرکت سرزد ہوتی ہے جو آپ نے اپنے سوال میں ذکر کی یعنی بیوی کے مخصوص حقوق سے روگردانی کرنا جیسے اس کے ساتھ رات بِتانا، جماع کرنا ، بوس وکنار یا قربت ودوستانہ رویہ اور جو اس کے علاوہ حقوق ہیں، تو انہیں نصیحت کی جاتی ہے کہ جڑ کر رہیں قربت پیدا کریں، اور ہر حقدار کو اس کا حق دیں۔ اپنے نفس کو بھی علم میں سے اس کا حق دیں یعنی اسے علم فراہم کریں، اور اپنے بیٹوں، بیٹیوں اور بیویوں کو بھی ان کے خاص وعام دیکھ بھال میں سے حقوق دیں۔

November 17, 2015 | الشيخ عبيد الجابري, متفرقات, مقالات | 0

tawheedekhaalis is on Mixlr

Tawheedekhaalis.com

Tawheedekhaalis.com