menu close menu

تراویح کے درمیان دروس کا اہتمام کرنا؟ – مختلف علماء کرام

Delivering Duroos during Taraweeh prayer? – Various 'Ulamaa

تراویح کے درمیان دروس کا اہتمام کرنا؟   

مختلف علماء کرام

ترجمہ وترتیب: طارق علی بروہی

مصدر: لقاء الباب المفتوح رقم 11، سلسلۃ الھدی والنور رقم 656، 693۔

پیشکش: توحیدِ خالص ڈاٹ کام


بسم اللہ الرحمن الرحیم

 

سوال: ہمارے یہاں ایک مسجد ہے جس میں تراویح کی ہر چار رکعات کے بعد وعظ ونصیحت کی جاتی ہے، کیا یہ جائز ہے؟ اگر یہ جائز ہے تو یہ وعظ ونصیحت (درس) کس طرح ہونا چاہیے؟

جواب از شیخ محمد بن صالح العثیمین رحمہ اللہ:

میری رائے میں ایسا نہ کیا جائے کیونکہ:

اولاً: یہ سلف صالحین کے طریقے میں سے نہیں۔

ثانیاً: لوگوں میں سے بعض یہ چاہتے ہوں گے کہ تہجد پڑھیں اور اپنے گھر لوٹ جائیں۔ لیکن ایسا کرنے سے ان کے لیے رکاوٹ وبوریت ہوگی اور انہیں اس وعظ ونصیحت کو سننے پر ناچاہتے ہوئے مجبور کیا جارہا ہوگا۔ حالانکہ  وعظ ونصیحت اس طرح کرنا کہ لوگ اس کی طرف راغب نہ ہوں فائدے سے زیادہ نقصان کا سبب ہے۔ اسی لیے نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو موقع محل کے اعتبار سے فوقتاً فوقتاً وعظ ونصیحت فرمایا کرتے تھے ان پر بے محل تکرار کا بوجھ نہيں ڈالتے تھے۔لہذا میں اسے ترک کرنے کو اولیٰ سمجھتا ہوں۔ اگر امام لوگوں کو وعظ ونصیحت کرنا چاہتا ہے تو اسے نماز کے بعد آخرمیں رکھے۔

 

سوال: تراویح کے مابین یا اس کے درمیان میں وعظ ونصیحت کرنا اور اسے دائمی طریقہ بنالینا کیسا ہے ؟

جواب از شیخ ابن عثیمین رحمہ اللہ:

جہاں تک وعظ ونصیحت کا تعلق ہے تو وہ اس طرح نہيں کرنا چاہیے کیونکہ یہ سلف کے طریقے میں سے نہیں۔ لیکن اگر ضرورت ہوتو انہیں بعد از نماز تراویح وعظ ونصیحت کرے ۔ اگر اس عمل کو وہ تعبدی طور پر (باقاعدہ بطور عبادت کے )جاری کیے ہوئے ہیں تو یہ بدعت ہے۔ اور اس کو تعبدی طور پر کرنے کی نیت کی علامت یہ ہے کہ اسے ہر رات مداومت کے ساتھ کیا جائے۔ پھر ہم ان لوگوں سے یہ بھی پوچھتے ہیں کہ: بھائی تم کیوں لوگوں کو اسی موقع پر ہی وعظ ونصیحت کرنا چاہتے ہو؟کسی شخص کو کوئی ضروری کام ہوسکتا ہے اور وہ بیچارہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اس فرمان کی محبت میں بیٹھا ہو:

’’مَنْ قَامَ مَعَ الْإِمَامِ حَتَّى يَنْصَرِفَ كُتِبَ لَهُ قِيَامُ لَيْلَةٍ‘‘([1])

(جو کوئی امام کے ساتھ قیام اللیل کرتا ہے یہاں تک کہ امام فارغ ہوجائے تو اس کے لیے مکمل رات کا قیام لکھا جاتا ہے)۔

اگر آپ اس وعظ ونصیحت کو پسند کرتے ہیں اور لوگوں میں سے بھی نصف لوگ اسے پسند کرتے ہیں بلکہ چاہے تین چوتھائی بھی پسند کیوں نہ کرتے ہوں تو بھی ان تین چوتھائی لوگوں کےلیے باقی ایک چوتھائی لوگوں کو پابند نہیں کیے رکھنا چاہیے۔ کیا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہ نہیں فرمایا کہ:

’’إذا أمّ أحدكم الناس فليخفف فإن من ورائه ضعيف والمريض وذي الحاجة‘‘([2])

(جب تم میں سے کوئی لوگوں کی جماعت کرواررہا ہو تو ہلکی نماز پڑھائےکیونکہ اس کے پیچھے بوڑھے، مریض اور حاجت مند لوگ بھی ہیں)۔  یا جیسا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا۔

یعنی سب کو اپنے آپ پر یا دوسروں ان لوگوں پر جو وعظ ونصیحت چاہتے ہیں قیاس نہ کرو۔ بلکہ لوگوں کو اس چیز پر قیاس کرو جو انہیں راحت پہنچائے۔ انہیں تراویح پڑھاؤ اور جب اس سے فارغ ہوجا‎ؤ اور نماز ختم کرچکو ساتھ ہی لوگ بھی فارغ ہوجائیں تو جو کچھ کہناچاہتے ہو وہ کہو۔ اللہ تعالی سے دعاء ہے کہ وہ ہمیں اور آپ سب کو علم نافع اور عمل صالح کی توفیق عنایت فرمائے۔

(لقاء الباب المفتوح رقم 11)

 

سوال: کیا نماز تراویح پڑھانے والے امام مسجد کے لیے جائز ہے کہ وہ رکعتوں کے درمیان وعظ ونصیحت کرے؟

جواب از شیخ محمد ناصر الدین البانی رحمہ اللہ:

جائز بھی ہے اور ناجائز بھی یعنی اگر کسی اچانک درپیش ہونے والے مسئلے پر تنبیہ،تحذیر(خبردار کرنا) یا امر ونہی مقصود ہو تو یہ بات واجب ہے۔ لیکن ویسے ہی اسے ایک باقاعدہ نظام بنادینا سنت کے خلاف ہے۔

(سلسلۃ الھدی النور رقم 656)

 

دوسرے مقام پر فرمایا:

قیام رمضان صرف نماز میں قیام کے ذریعےزیادہ سے زیادہ تقرب الہی حاصل کرنے کے لیے مشروع کیا گیا ہے۔ اسی لیے ہم اسے صحیح نہیں سمجھتے کہ نماز تراویح کو علم وتعلیم (درس دروس وغیرہ) کے ساتھ مخلوط کیا جائے۔ چاہیے کہ قیام رمضان کو محض عبادت تک ہی رکھا جائے۔ جبکہ علم کا اپنا وقت ہوتا ہے وہ کسی خاص زمانے سے مقید نہیں، بلکہ اس میں جنہیں تعلیم دی جارہی ہے ان کی مصلحت کا خیال رکھا جائے گا۔ یہی اصل اصول ہے۔ اور میری اس سے مراد یہ ہے کہ جو اسے عادت بنالیتا ہے کہ مثلا قیام اللیل میں ہر چار رکعات کے بعد ایسا کرتا ہے تو یہ دین میں نیا کام ہے اور سنت کے مخالف ہے۔

(سلسلۃ الھدی والنور رقم 693)

 


[1] صحیح ترمذی 806۔

[2] صحیح مسلم 468 کے الفاظ ہیں: ’’إِذَا أَمَّ أَحَدُكُمُ النَّاسَ، فَلْيُخَفِّفْ، فَإِنَّ فِيهِمْ الصَّغِيرَ، وَالْكَبِيرَ، وَالضَّعِيفَ، وَالْمَرِيضَ، فَإِذَا صَلَّى وَحْدَهُ، فَلْيُصَلِّ كَيْفَ شَاءَ‘‘ (جب تم میں سے کوئی لوگو ں کی امامت کروائے تو اسے ہلکے رکھے، کیونکہ ان میں چھوٹے، بڑے، ضعیف اور مریض سب ہوتے ہیں،  اور اگر اکیلا پڑھے تو جیسے چاہے پڑھے) (توحید خالص ڈاٹ کام)

June 14, 2016 | الشيخ محمد بن صالح العثيمين, الشيخ محمد ناصر الدين ألباني, فقہ وعبادات, مقالات | 0

tawheedekhaalis is on Mixlr

Tawheedekhaalis.com

Tawheedekhaalis.com